آنکھوں سے پانی آتا ہو تو اس کا علاج کیسے کیا جاتا ہے؟

آنکھوں سے پانی آتا ہو تو اس کا علاج کیسے کیا جاتا ہے؟

پانی بہنے کا علاج کیا ہو تا ہے؟

چھوٹے بچوں میں

چھوٹے بچوں میں بچوں کی ایک بڑی تعداد ایسی ہو تی جس میں یہ نالی بند ہوتی ہے۔ اِس کے بند ہونے کی وجہ زیادہ تر یہ ہوتی ہے کہ اِس نالی نشوونما ابھی نا مکمل ہوتی ہے اور بڑا ہونے کے ساتھ جس طرح باقی اعضاء مکمل ہوتے ہیں اِسی طرح یہ نالی بھی مکمل ہو جاجی اور خود بخود کُھل جاتی ہے۔اِن بچوں میں کِسی اپریشن کی ضرورت نہیں ہو تی۔ اس دوران میں اُن کیآنکھوں سے پانی آتا رہتا ہے لیکن اُس کا کوئی نقصان نہیں ہوتا۔ خود بخود ٹھیک ہونے کی عمر ایک سال ہوتی ہے۔ اگر ایک سال تک یہ نالی نہیں کُھلتی تو پھر کبھی بھی خود بخود نہیں کُھلے گی؛ اس کو کھولنے کیلئے اپریشن ضروری ہوتا ہے۔

  • کئی بچوں کی آنسوؤں کی تھیلی میں انفیکشن ہو جاتی ہے جس سے آنکھ سے گندا مواد بھی خارج ہونے لگتا ہے۔ چنانچہ اگر پانی کے ساتھ ساتھ پیپ بھی آنے لگے تو پھر ایسی کیفیت میں ادویہ کا اِستعمال ضروری ہوتا ہے تاکہ سوزش ٹھیک ہو جائے اور آنسوؤں کی تھیلی میں سوزش کی کیفیت مستقل نہ پیدا ہو نے پائے۔
  • اگر تھیلی کے اندر مستقل طور پر سوزش رہنے لگے اور دوائیوں سے ٹھیک نہ ہو تو بہتر ہوتا ہے کہ ایک سال کی عمر کا اِنتظار نہ کیا جا ئے۔ اور اپریشن کر دیا جا ئے۔
  • اِن بچوں کی اکثریت میں چھوٹے اپریشن یعنی Probing سے مسئلہ حل ہو جاتا ہے۔
  • جِن میں اِس سے مسئلہ حل نہ ہو یا رستہ بند ہو نے کی دیگر وجُوہات میں سے کوئی اور وجہ ہو تو پھر بڑا اپریشن یعنی DCR ضروری ہوتا ہے۔ اور اکثر اوقات اپریشن کے ذریعے ایک نالی ڈال دی جاتی ہے جو کئی مہینے بعد نکالی جاتی ہے۔

بڑی عمر کے لوگوں میں

بڑی عمر کےلوگوں میں علاج بیماری کی نوعیّت کے مطابق مختلف ہوتا ہے۔ چند صورتیں ذیل میں بیان کی گئی ہیں:

  • ایک بہت بڑی تعداد صرف دوائیکے اِستعمال سے ٹھیک ہو جا تی ہے۔
  • بہت سے لوگوں میں نکاسی کے راستے کے ابتدا ئی حصوں میں رُکاوٹ ہوتی ہے مثلاً لقوہ کے نتیجے میں یا فالج کی دیگر اشکال میں۔ اِن کی آنکھ میں پمپ کرنے کا نظام متأثر ہو جاتا ہے۔ یا نکاسی کی نالی کا منہ آنکھ سے دور رہنے لگتا ہے۔ اِن صورتوں میں متعلقہ سبب کو دُور کرنے سے پانی بہنا رُک جاتا ہے۔ اِن میں سے زیادہ تر کا علاج اپریشن سے کیا جاتا ہے۔
  • جِن لوگوں میں نالی بند ہو اُن کی بھی ایک بہت بڑی تعداد کا چھوٹے اپریشن یعنی Probing سے مسئلہ حل ہو جاتا ہے۔
  • جِن کا مسئلہ اِن طریقوں سے حل نہ ہواُن کا پھر بڑا اپریشن یعنی DCR ضروری ہوتا ہے۔

DCR اپریشن کیا ہوتا ہے اور اِس میں اِخراج کی رُکاوٹ دُور کرنے کے لئے کیا طریقہ اختیار کیا جاتا ہے؟

یہ اپریشن کیا ہوتا ہے، کسی آرٹسٹ نے سمجھانے کی کیا خوب کوشش کی ہے۔ دیکھیے اور سمجھنے کی کوشش کیجیے:

اِس تصویر میں بتایا گیا ہے کہ اِس طرح آنکھ اور ناک کا آپس میں قریبی رشتہ ہوتا ہے۔ اِس مریض کی آنکھ ممکن ہے کینسر کے سبب نکلا دی گئی ہو۔ بہرحال اب ناک اور آنکھ میں اتنا رابطہ ہے کہ انگلی گذر رہی ہے۔ بالکل اِسی طرح DCR اپریشن میں بھی ناک اور آنکھ میں راستہ بنا دیا جاتا ہے۔ یہ قدرتی راستے کا متبادل ہوتا ہے اور پانی آنکھ سے ناک کی طرف جانا شروع ہو جاتا ہے۔ البتّہ یہ مصنوعی راستہ کبھی بھی قدرتی راستے کا نعم البدل نہیں ہو سکتا۔ اِس کے جہاں فوائد ہیں وہاں اِس کی وجہ سے کئی پیچیدگیاں بھی پیدا ہو جاتی ہیں۔ سب سے بڑا مسئلہ تو یہ ہے کہ بہت سارے مریضوں میں وقت کے ساتھ ساتھ یہ راستہ دوبارہ بند ہو جاتا ہے۔ یعنی اِس اپریشن میں ناکامی کا امکان بہت زیادہ ہوتا ہے۔