چلتی بس میں نکاح!

دروغ بر گردن راوی 2001 میں لاہور سے کراچی جانے والی ڈائیوو بس میں ایک عجیب و غریب واقعہ پیش آیا جو کچھ یوں تھا:

جب بس سٹیشن سے چل پڑی توفرنٹ سیٹ پربیٹھے ایک بزرگ جوبہت اچھے کپڑے پہنے ہوئے تھے کھڑے ہوگئے اورباقی مسافروں سے مخاطب ہوکرکہامیرے بھائیواوربہنو،میں کوئی بھکاری یاگداگرنہیں ہوں اللہ تعالیٰ نے مجھے اپنی نعمتوں سے نوازاہے مگرمیری بیوی ایک موذی مرض سے اللہ کوپیاری ہوگئی ،کچھ دن گزرے اورمیری فیکٹری میں آگ لگ گئی میں درآمداوربرآمدکاکاروبارکرتاہوں میراتیارشدہ سارامال جل کرخاکسترہوگیا۔پھرکچھ مدت گزری کہ مجھے دل کادورہ پڑارشتہ داروں نے جب یہ محسوس کیاکہ اس کے برے دن آنے لگے انہوں نے ہم سے رابطہ منقطع کرلیا۔ڈاکٹروں نے میرے بچنے کی ضمانت کم ہی دی ہے میری یہ جوان بیٹی ہے اس کاکوئی وارث نہیں رہے گاکوئی اس کے دامن عصمت کوتاتارنہ کرے یہی غم زیادہ کھائے جارہاہے اوراس شخص کی ہچکی بندھ گئی یہ جوانسال لڑکی جوپاس میں بیٹھی تھی اٹھی اورباپ کوسہارادے کرسیٹ پربٹھادیا۔بس کی پچھلی سیٹ سے آدمی کھڑاہوگیااورکہنے لگا،میرے 2بیٹے ہیں ایک ڈاکٹرہے اس کانکاح ہوچکاہے اوردوسرایہ جواس شخص کے آگے بیٹھاہواہے ۔انجینئرہے اس کے لیے دلہن کی تلاش ہے ۔میں اس بزرگ سے درخواست کرتاہوں کہ یہ اپنی بیٹی کانکاح میرے اس بیٹے سے کردے میں وعدہ کرتاہوں کہ اس بچی کوکبھی باپ کی کمی محسوس نہیں ہونے دوں گا۔لڑکاکھڑاہوگیااورکہاکہ مجھے رشتہ قبول ہے۔بس میں موجودایک مولوی صاحب کھڑے ہوکرکہنے لگے ’’یہ سفربہت مبارک سفرہے‘‘نکاح جیسامقدس عمل ہوجائے وہ بھی سفرمیں اس سے اچھی بات کیاہوگی؟؟اگرلوگوں کواعتراض نہ ہوتومیں نکاح پڑھادوں ’’سب کہنے لگے ‘‘ماشااللہ۔سبحا ن اللہ ۔الحمدللہ ۔وغیرہ وغیرہ‘‘اورمولوی صاحب نے نکاح پڑھادیا۔

ایک اورصاحب کھڑے ہوگئے اورکہنے لگے ،میں چھٹی پہ جارہاتھااپنے گھروالوں کے لیے لڈولے کرمگراس مبارک عمل کودیکھ کرسمجھتاہوں کہ لڈوادھرہی تقسیم کردیں ۔دلہن کے باپ سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا۔دلہن کے باپ نے ڈرائیورسے کہاڈرائیورمیاں 5منٹ کسی جگہ بس روک دیناتاکہ سب مل کرمنہ میٹھاکرلیں ،ڈرائیورنے کہاٹھیک ہے باباجی ۔مغرب کی نماز کے بعدجب اندھیراہونے لگاتولڑکی کے باپ نے ڈرائیورسے بس روکنے کوکہااورسب مسافرمل کرلڈوکھانے لگے ۔لڈوکھاتے ہی سب مسافرسوگئے ڈرائیوراورکنڈیکٹرجب نیندسے جاگے تواگلی صبح کے 8بجے تھے مگردلہن اوردولہاان کے دوباپ ،مولوی صاحب اورلڈوبانٹنے والابس سے غائب تھے اتناہی نہیں بلکہ کسی مسافرکے پاس گھڑی تھی نہ چین اورنہ ہی پیسے بلکہ کچھ بھی نہیں تھاان کویہ 6ممبرز کاگروپ مکمل طورپرلوٹ چکاتھا۔

Something very strange! Does it mean something?

Very strange phenomenon:

*Beautiful msg to share:*

*Do you agree that we have 26 alphabets in English, as given below*

 

*A = 1 ; B = 2 ; C = 3 ; D = 4 ;*

*E = 5 ; F = 6 ; G = 7 ; H = 8 ;*

*I = 9 ; J = 10 ; K = 11 ; L = 12 ;*

*M = 13 ; N = 14 ; O = 15 ; P = 16 ;*

*Q = 17 ; R = 18 ; S = 19 ; T = 20 ;*

*U = 21 ; V = 22 ; W = 23 ; X =24 ;*

*Y = 25 ; Z = 26.*
*With each alphabet getting a number, in chronological order, as above, study the* *following, and bring down the total to a single digit and see the result yourself*
*Hindu -*

*S  h  r  e  e   K  r  i  s  h  n  a*

19+8+18+5+5+11+18+9+19+8+14+1

=135

*=1+3+5 = 9*
*Muslim*

*M  o  h  a  m  m  e  d*

13+15+8+1+13+13+5+4

= 72

*= 7+2 = 9*
*Jain*

*M a  h a v  i  r*

13+1+8+1+22+9+18

  =72

*= 7+2= 9*
*Sikh*

*G  u  r  u   N  a  n  a  k*

7+21+18+21+14+1+14+1+11 

=108 

*=1+0+8 = 9*
*Parsi*

*Z  a  r  a  t  h  u  s  t  r a*

26+1+18+1+20+8+21+19+20+18+1

=153

*=1+5+3 = 9*
*Buddhist*

*G  a   u  t  a  m*

7+1+21+20+1+13

=63

*= 6+3 = 9*
*Christian*

*E  s   a  M  e  s  s  i   a  h*

5+19+1+13+5+19+19+9+1+8

=99

9+9=18

*1+8 = 9*
*Each one ends with number  9*

ﺭﻭﺍﺝ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﺟﻨﻢ ﻟﯿﺘﯽ ﮨﯿﮟ؟

کچه سمجهدار لوگوں ﻧﮯ ﭘﺎﻧﭻ ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ
ﭘﻨﺠﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﺪ ﮐﺮﺩﯾﺎ . ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﺭﮐﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﮐﯿﻼ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ . ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﯿﻼ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﻮ ﺩﯾﮕﺮ ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﯾﺦ ﺑﺴﺘﮧ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺑﻮﭼﮭﺎﮌ ﮐﺮﺩﯼ ﺟﺎﺗﯽ . ﮐﭽﮫ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﺳﯿﮑﮫ ﻟﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﻥ ﭘﺮ ﯾﮧ ﻋﺬﺍﺏ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ . ﺍﺏ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﯿﻼ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﻮ ﺩﯾﮕﺮ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﻨﺪﺭ ﺍﺱ ﭘﺮ ﭼﮍﮪ ﺩﻭﮌﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺎﺭ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﺩﯾﺘﮯ ….
لوگوں ﻧﮯ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﻮ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﺎﻻ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﻧﯿﺎ ﺑﻨﺪﺭ ﭘﻨﺠﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﺮﺩﯾﺎ . ﻧﯿﺎ ﺑﻨﺪﺭ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﻠﮯ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﺒﮭﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﻨﺪﺭ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺘﮯ . ﮐﭽﮫ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪﺭ ﺑﮭﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮭﮍﻧﺎ ﻣﺎﺭ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﮬﮯ . ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﻨﺪﺭ ﺑﺪﻝ ﺩﺋﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﻨﮉﮮ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺑﻮﭼﮭﺎﮌ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﻣﮕﺮ ﮨﺮ ﻧﯿﺎ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﻨﺪﺭ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﭘﺮ ﻣﺎﺭ ﮐﮭﺎﺗﺎ ﺭﮬﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﮔﺮﻭﮦ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﺑﻨﺘﺎ ﮔﯿﺎ ﺟﻮ ﮨﺮ ﻧﺌﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﭘﺮ ﻣﺎﺭﺗﮯ ﺗﮭﮯ ….. ﮐﭽﮫ ﺩﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺴﯽ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﯿﻮﮞ ﻣﺎﺭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺭ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﮐﭽﮫ ﭘﺘﮧ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺳﮑﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﻣﺎﺭﺍ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ …..
ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﺍﮬﻤﺎﺕ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﭽﮫ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ .
ﺍﭘﻨﮯ ﺑﮍﻭﮞ ﮐﮯ ﺍﻃﻮﺍﺭ ﮐﻮ ﺟﺐ ﮨﻢ ﻭﺟﻮﮨﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺩﻻﺋﻞ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻋﺎﺩﺍﺕ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﺑﻨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺗﻮﺍﮨﻤﺎﺕ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ … ﮬﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻥ ﺭﺳﻮﻣﺎﺕ ﻭ ﺍﻃﻮﺍﺭ ﮐﺎ ﭘﺎﺑﻨﺪ ﺗﻮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﺮ ﺭﮬﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺷﻌﻮﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ . ﯾﮩﯽ ﻋﺎﺩﺍﺕ ﻭ ﺭﺳﻮﻣﺎﺕ ﺍﮔﻠﯽ ﺳﭩﯿﺞ ﭘﺮ ﻋﻘﺎﺋﺪ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻟﯿﺘﯽ ﮨﯿﮟ …
ﺍﻭﺭ ﻋﻘﺎﺋﺪ ﮐﻮ ﭼﯿﻠﻨﺞ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﺎﺭ ﺛﻮﺍﺏ ﻭ ﺭﺍﮦ ﻧﺠﺎﺕ ﮔﺮﺩﺍﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ذیابیطس سے کیسے بچا جا سکتاہے؟

‏  ذیابیطیس سے بچنے کے لئے ضروری ہے کہ روز مرہ زندگی میں متوازن غذا کا استعمال کریں اور ورزش کو اپنا معمول بنائیں، تلی ہوئی چیزوں اور چکنائی سے پرہیز کیا جائے سبزیوں اور پھلوں کا استعمال کیا جائے۔