غزلیں

غزلیں

ہاں اُس کے تو تھا ——- زرہ پوش ہوا میں

منصہ شہود پہ کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔  روپوش ہوا میں

پارہ پارہ میں ہوا اور—– ٹکڑا ٹکرا وہ ملا

اے عشق آخر کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ بادہ نوش ہوا میں

جذبات کے سمندر میں بہہ بہہ کے اب تو

صاحب نغمہ ٹھرا —- فردوش گوش ہوا میں

نغمہ لا الہ ہے —— کتنا سحر انگیز آصف

بول اُٹھا پھر خود ہی ۔۔۔۔۔۔۔ مدہوش ہوا میں

———————————————-

قدرِ گہر سیکھی ہم نے ۔۔۔۔ قطرہ نیساں سے

غواص سے گلہ کروں یا کہوں آسماں سے

زمیں چھوڑ آسماں تلک بھی ہو آئے آصف

مگر کیا ملا؟ ۔۔۔ اس درویش بے آستاں سے

معمارِ گراں فکر سے اور پیمانۂ سیماب سے

بے التفات گزر چلا ہوں نعرۂ کُن فکاں سے

گیرائی تاب سے، گہرائی جہانِ سحرناک سے

جو فراغت ملے تو ملوں ناقدِ نکتہ سنجاں سے

واقفِ اسرار ایسا کہ ہمہ وقت غلطاں و پریشاں

ہے بیگانہ قرار سے — لذتِ وصل و گماں سے

میری داستاں کو پیمانہ شب و راز سے نہ ناپ

صاحبِ لمحہ حضور ہوں غافل ہوں غم مژگاں سے

—————————————————–

بے وقت بُکا سے———کچھ حاصل نہیں ہوگا

گزر چکا جو وقت——-وہ پھر حاصل نہیں ہو گا

وہ داستانِ عمل کہ جو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نقشِ دیوار بن گئی

لفظ سنا ہے ایک بھی ۔۔۔۔۔۔۔ اُس کا باطل نہیں ہوگا

شرر کیا شعلہ بھی —- وہاں بے اثر ہو جائے گا

خمیر تیرا اگر—- سنورنے  کے قابل نہیں ہو گا

ہر شخص کے لب پر ہیں دُعائیں— میرے لئے

دل یہ کہتا ہے  —–  کوئی بھی قاتل نہیں ہوگا

ہمتِ مسلسل سے ہمکنار ہو جا  ۔۔۔— اے غافل

مر چکا وہ آصف حصول کے جو قابل نہیں ہوگا

————————————————

بے امیدی میں بھی—— یقیں کا سہارا پاتا ہوں

ہمیشہ ہی میں تو—— اک غیبی اشارہ پاتا ہوں

بلا کی سرگرمی بھی،     انتہائی بے حسی بھی

آئینۂ جہاں میں اکثر—- موت کا نظارہ پاتا ہوں

——————————————-

 

 

ڈاکٹر آصف کھوکھر

اگر کوئی سوال آپ پوچھنا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں۔ اپنی رائےیا تجویز سے مجھے آگاہ فرمانا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں میں انشاءاللہ جلد از جلد آپ سے رابطہ کروں گا۔