سراج لالہ کی “ڈرامائی” سادگی

طارق حبیب
۔
جناب معاملہ یہ ہے کہ ۔۔۔۔ یہ سادگی مصنوعی ہو یا حقیقی ۔۔۔۔۔ آپ کو کھٹکتی کیوں ہے؟؟؟؟؟….۔۔۔قاعدہ ہے کہ یکسانیت سے ہٹ کر جو عمل ہو۔۔۔۔اور آپ کے نظریے و عقیدہ کے مطابق میل بھی کھاتا ہو۔۔۔۔اپنا علیحدہ تشخص کی پہچان کیلئے۔۔۔۔۔اسی کو عوام کے سامنے لایا جاتا ہے۔۔۔۔۔
۔
چلو سراج لالہ کی سادگی کو رکھے ایک طرف۔۔۔۔۔ اب بتائیں آپ اپنے رہنمائوں کے ۔۔۔۔ کس عمل کی تشہیر کرنا پسند کریں گے۔۔۔۔۔۔ گندے گندے میسجز کی جو مائوں بہنوں کو بھیجے جاتے ہیں۔۔۔۔۔یا سلفی، چرس، شراب کی۔۔۔۔۔جو سر عام پی جاتی ہے۔۔۔۔۔ ۔
۔
بتائیں نا۔۔۔۔۔کس عمل کو عوام میں معروف ٹھہرائیں گے۔۔۔۔۔ایان علی جیسے کرداروں کے ذریعے منی لانڈرنگ۔۔۔۔۔یا ڈاکٹر عاصم جیسوں سے اربوں کی کرپشن۔۔۔۔۔ عوام کو کیا بتائیں گے ۔۔۔۔سیاسی مفاد کیلئے ۔۔۔۔۔ خاندانی نام تبدیل کرلو۔۔۔۔۔بھٹو زرداری ہو جائو۔۔۔۔۔یا اپنی خواتین کے ساتھ شراب نوشی کی تصویریں عام کرو۔۔۔۔یا سرے محل سوئس اکائونٹس۔۔۔کی تصاویر پھیلائی جائیں یا۔۔۔۔۔گے کلب میں بلاول کے کارناموں کی تصویریں۔۔۔۔بتائیں یار۔۔۔۔۔
۔
یا آفشور کمپنیوں کے ذریعے ٹیکس چوری۔۔۔۔ جاتی عمری۔۔۔۔۔قطری شہزادے کے خطوط۔۔۔۔۔یا کرپٹ اولاد۔۔۔۔۔کی تصاویر وائرل ہونی چاہئے آپ کی نظر میں۔۔۔۔۔۔
۔
تاکہ بقول آپکے۔۔۔۔۔عوام کو شعور آگیا ہے تو۔۔۔۔عوام کو ان کی تقلید کرنی چاہئے۔۔۔۔؟؟؟؟؟
۔
برا مت بنانا۔۔۔۔سادگی پر مرچیں تو بہت لگتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلو بتائو جب اپنے گھر میں سیاسی شعور و وژن دینا چاہو گے۔۔۔۔۔تو کس رہنما کی تقلید کا مشورہ دوگے۔۔۔۔۔بتائو بھی یار۔۔۔۔۔کیا دینا چاہو گے؟؟؟؟ ۔۔۔۔
۔
سراج لالہ سر راہ خط کیوں بنواتے ہیں۔۔۔۔فائیو اسٹار بیوٹیشن کے پاس جانا چاہئے؟؟؟؟۔۔۔۔۔جیسے صنف نازک سے بال کٹوانے والے۔۔۔۔۔فخر سے اپنی تصاویر شیئر کرتے ہیں۔۔۔۔
۔
سراج لالہ کی سادگی کو پرموٹ کیوں کیا جاتا ہے۔۔۔۔۔جی ہاں بالکل ۔۔۔۔۔ 26 تا 30 محافظ گاڑیوں کے پہرے میں جاتے۔۔۔۔رہنمائوں کی تصاویر کو پرموٹ کرنا چاہئے۔۔۔۔۔۔بلٹ پروف شیشے کے پیچھے سے خطاب کرتے رہنمائوں ۔۔۔۔ کی تقلید کی دعوت دینی چاہئے۔۔۔۔۔سرکاری وسائل کے بے جا استعمال اور لوٹ مار کی ۔۔۔۔تشہیر کرنی چاہئے۔۔۔۔۔۔
۔
ارے او جھانپئوں۔۔۔۔
۔
سراج لالہ کی تصویر کارکن بناتے ہیں ۔۔۔۔۔ محبت میں۔۔۔۔فخر سے عوام کو بتاتے ہیں یہ ۔۔۔۔فرق ہے دوسروں اور ہم میں۔۔۔۔۔ورنہ تو رائٹ کے رہنما اور بھی ہیں۔۔۔۔ ڈبل کیبنوں میں درجنوں ڈشکرے گارڈز۔۔۔۔اور جیمرز وہیکل بھی ساتھ ہوتی ہیں۔۔۔۔۔
۔
جناب من ۔۔۔۔۔
۔
۔ تشہیر ایسے عمل کی ہوتی ہے جو۔۔۔۔دوسروں سے الگ ہو۔۔۔۔ آپ کی نمود نمائش کی اس دنیا میں ایسے لوگ بھی ہیں۔۔۔۔جو مصنوعی چکا چوند کو سے متاثر نہیں ہوتے۔۔۔۔اگر ایسی مصبوعیت کو کوئی جوتے کی نوک پر رکھتا ہے۔۔۔۔۔پروٹوکول، وی آئی پی کلچر پر تھوکتا ہے۔۔۔۔تو وہ تشہیر چاہے نہ چاہے۔۔۔۔۔اس کے فالوورز تو چاہیں گے۔۔۔۔۔کیونکہ یہی ان کے رہنما کی انفرادیت ہے۔۔۔۔
۔
بات مزید آسان کئے دیتا ہوں۔۔۔۔اب دیکھیں نا۔۔۔۔۔
۔
میڈیا پر لبرلز اور لیفٹ کا دور دورہ ہے۔۔۔۔۔آپ ان میں گھل مل کر اپنی پہچان نہیں بنا سکتے تھے ۔۔۔۔۔ اسلئے آپ نے اپنی۔۔۔۔۔فلسفیت اور دانشوریت میں۔۔۔۔مذہب کا تڑکہ لگانے پر مجبور ہیں۔۔۔۔۔ایسے ایشوز کو اٹھا کر اپنا قد بڑھانے کی کوشش کرتے ہیں۔۔۔۔۔جو رائٹ کے ایشوز قرار پاتے ہیں۔۔۔۔۔ اپنے منجن میں مذہبی آمیزش کرنا ۔۔۔۔۔ آپ کی مجبوری ہے جناب۔.۔۔ ورنہ اب تو آپ کو اکا دکا لوگ جانتے ہیں۔۔۔۔۔اگر ایسا نہ کریں گے تو۔۔۔۔ماضی کی طرح گمنامی میں رہیں گے۔۔۔۔جو آپ جیسے شہرت کے ہوس کے پجاریوں کی موت ہے۔۔۔۔۔۔
۔
امید ہے افاقہ ہوا ہو گا۔۔۔۔ نہ ہوا تو۔۔۔۔ اگلا اسٹیٹس اس جملے سے شروع کرونگا۔۔۔۔۔۔
۔
استاد محترم سے معزرت کے ساتھ۔۔۔۔۔
۔
رہے نام مولا کا

Author: Dr Asif Mahmood Khokhar

Senior eye surgeon with special interest in Vitreoretinal, Oculoplastic, Laser, and Phaco surgeries

Leave a Reply

Be the First to Comment!

اگر کوئی سوال آپ پوچھنا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں۔ اپنی رائےیا تجویز سے مجھے آگاہ فرمانا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں میں انشاءاللہ جلد از جلد آپ سے رابطہ کروں گا۔

wpDiscuz