یا خُدا

یا خُدا

کڑی دُھوپ ہے

اور میں منتظر!

مُتجسّس ہوں اور بندِ سُراباں میں گُم

ہر ساعت اِک نیا ہی بہروپ ہے!

قفس بدست منہ کھولے ہوئے

صیّاد بنا ہوا ہے ہر کوئی

ہے ہر کوئی سامری — پیچیدہ تر ہے کارِ طلسم 

اور میں منتظر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اِک سوال ہے؛ باعثِ وبال ہے

دل ہے کہ قدم بہ قدم مائلِ زوال ہے

کِدھر جاؤں اور کِسے آقا بناؤں؟

ہر قدم کے بعد پڑتا ہے سوچنا مجھے

کہاں جا گِروں کہ اُٹھ نہ پاؤں ۔۔۔۔۔۔

صد حیف کہ پڑتا ہے باربار پرکھنا مجھے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے چہار طرف محاصرہ ہے

کوئی سرمایے کو لئے اور کوئی اِشتراک کو لئے کھڑا ہے

کسی نے عیش وطرب کی رسی کو تھام رکھا ہے

کسی کا کوئی خُدا نہیں اور کسی کا پیغمبر خدا ہے

غضب خدا کا کسی نے اسلام کا لبادہ اوڑھ لیا ہے

کُچھ تو سامنے آکر وار کرتے تھے

کُچھ نے پہلو سنبھالا ہوا تھا 

اور کُچھ عقب کا دم بھرتے تھے

مگر یہ عین درمیاں جا گزیں ہے!

اندر ہے شاید رہبانیت مگر باہر سراسر دیں ہے!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں کس کس سے بچاؤں خود کو ؟

کدھر کدھر سے اطمینان دلاؤں دل کو؟

کہیں آندھی ہے کہیں شعلہ ہے

کوئی رہزن ہے اور کوئی قاتلِ ولولہ ہے!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

الہی تاریک شب میں مستقل روشنی عطا کردے

مجھے توفیق دےدے۔۔۔۔ میری خواہش جواں کر دے

 

ڈاکٹر آصف کھوکھر

اگر کوئی سوال آپ پوچھنا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں۔ اپنی رائےیا تجویز سے مجھے آگاہ فرمانا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں میں انشاءاللہ جلد از جلد آپ سے رابطہ کروں گا۔