اک کہانی

اک کہانی

پنجاب میڈیکل کالج کے حالات کے پس منظر میں

ظُلم نے فطرت کو کچلنے کی قسم کھا لی تھی

ہر ظلم نے اک ہیبت ناک شکل بنا لی تھی

ظُلم پھدکتا تھا مچلتا تھا

ہر عدل و راحت کو جکڑتا تھا

عدل کے پاٶں سُن ہو چکے تھے

یا شاید اُس کے بازو شَل ہو چکے تھے

شریف کی آن خطرے میں تھی

کمزور کی جان خطرے میں تھی

صاحب کا وقار خطرے میں تھا

ذی شانوں کی شان خطرے میں تھی

علم کو سُولی کی طرف کھینچا جا رہا تھا

انسانیت کی پہچان خطرے میں تھی

تم نے بات کیوں کی؟ تم نے دیکھا کیوں؟

تم چلتے ہو؟ وہ ہے بیٹھا کیوں؟

آج تم کو یاں سے نکال کے دم لوں گا

کل تم نے تھا اپنا دامنِ انصاف پھیلایا کیوں؟

تم حق لیتے ہو؟ یاں حق لینے کا رواج نہیں ہے

نکل جاٶ اِس جہاں سے اِسے تھا گھر بنایا کیوں؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خُدا کا فرمان ہے عدل اور انصاف ہو

رسولﷺ نے فرمایا کہ کبھی نہ ظلم کی بات کرو

علم و عرفان کے عروج نے یہی دیا ہے درس

سائنس بھی یہ کہتی ہے کہ ہر چیز مطابقِ فطرت ہو

ظلم کا انجام ہمیشہ ہی جہنم ہوا ہے

جنت کی تلاش کرو ظلم سے ہمیشہ بچو

تعمیر دارالاسلام کی فریضہ ہے اپنی قوم کا

فرائض اپنے پہچانو اور توہیں انسانیت نہ کرو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خبردار— یہ بکواس کدھر ہو رہی ہے؟

میری موجودگی میں یہ جسارت کدھر ہو رہی ہے؟

عقل و علم و دانش کا قتل یہ سرِ عام

ظلم کو مٹانے کی بات۔۔۔۔۔ اقدامِ قتل کی جسارت کدھر ہو رہی ہے؟

تفریحِ قلب ہے گر معصیت تو بر سرِ عام کروں رہا ہوں

سرودو رقص و راگ ہر تفریح ادھر ہو رہی ہے

کون روکتا ہے مجھے؟ کوئی سامنے تو آئے

کون روکتا ہے مجھے؟ کوئی سامنے تو آئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عدل نے جب ظلم کو ببانگِ دُہل دھاڑتے دیکھا

ایوان ِ عدل کی آخری اینٹ کو جب اُ کھاڑتے دیکھا

اُس نے خدائے بزرگ و برتر کا نام لے کر

عظیم خیالات پاکیزہ نظریات کا سامان لے کر

وحشی جانور کو لگام دے دی

لوگوں کو انسانیت بطور انعام دے دی

غرور کی گردن مروڑ کر بد اخلاقی کا سومنات توڑ کر

امن کی مہر لگا دی غلامیٔ خیر الانام دے دی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ظلم شاید مٹتا نہیں ہے

دبائیں بھی تو دبتا نہیں ہے

نئے بہروپ، نئے چہرے، نئی حیثیتیں بنا لیتا ہے

چیلے گر مر جائیں تو خود دامنِ ابلیس میں جا پناہ لیتا ہے

چنانچہ عدل کسی اور کمیں گاہ کا نشانہ بن گیا

اور انسدادِ ظلم کی جو داستانِ طویل تھی وہ محض افسانہ بن گیا

پھر قفس نے منہ کھول دیے اور اندھیرے چھا گئے

اوباش غنڈوں کے بدل میں باوردی سپاہی آ گئے

میرے پیارے بھائی کی آہوں کو بھی نہ دیکھا گیا

میرے تحسین کے زخموں کو بھی نہ بخشا گیا

میرے نواز کے وہ بوڑھے والد صاحب

اُن کے عظیم بڑھا پے کا بھی نہ سوچا گیا

میرے افضل کے روشن مستقبل کے سپنے

میرے اسلم کے حسین ارمانوں کو بھی نہ دیکھا گیا

آہ معصوم جوانوں کی نزاکت کو بھی سے کھیلا گیا

چوروں ڈاکوٶں سے بھی زیادہ اُن کو رگیدا گیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

الہی ظلم کی بھیانک رات کو ختم کر دے

مہیب اندھیروں کو ہٹا کر پُر نور و حسیں سحر دے

جان کی مال کی عزت کی حفاظت عطا کر دے

ظلم کی سرخ آندھیوں کو مثلِ ابرِ کرم کر دے

میری بے بسی کو دیکھ میرے محتسب کی داد رسی کو دیکھ

میری رسیوں کو کھول دے مجھے آسودۂ جاں کر دے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

 

 

 

ڈاکٹر آصف کھوکھر

اگر کوئی سوال آپ پوچھنا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں۔ اپنی رائےیا تجویز سے مجھے آگاہ فرمانا چاہیں تو یہاں لکھ کر پوسٹ کر دیں میں انشاءاللہ جلد از جلد آپ سے رابطہ کروں گا۔